|

وقتِ اشاعت :   January 7 – 2017

کراچی پریس کلب کی دیواروں پر مذہبی جماعت کے کارکنوں کی جانب سے خراب کی گئی پینٹینگز کو پھول پتی پاکستان ٹرک آرٹ ٹیم نے دوبارہ ٹھیک کردیا۔

ٹرک آرٹ ٹیم کی فیس بک پوسٹ کے مطابق پینٹنگز کی درستگی کا کام مشہور کارٹونسٹ فیکا کی مدد سے مکمل کیا گیا۔



پنٹنگز کی درستگی کا کام اب بھی جاری ہے—فوٹو: پھول پتی پاکستان ٹرک آرٹ ٹیم فیس بک پیج


یاد رہے کہ پریس کلب کی دیواروں پر انسانی حقوق، خواتین کی آزادی اورزندگی کے مختلف شعبوں میں خدمات انجام دینے والی خواتین پروین رحمٰن، زبیدہ مصطفیٰ، یاسمین لاری، فاطمہ ثریا بجیا کی پینٹگز بنی ہوئی ہیں، نامعلوم افراد نے اسپرے پینٹ کے ذریعے ان کو خراب کرتے ہوئے صحافیوں کو دھمکیاں اور اپنے گرفتار کارکنان کی رہائی کےحق میں نعرے لکھ دیئے گئے تھے۔

ان تصاویر پر اسپرے پینٹ کرنے والے افراد کی شناخت تو نہ ہوسکی تاہم دیواروں پر پی ایس ٹی اور ٹی ایل وائی کے الفاظ لکھیں ہیں جو کہ مذہبی تنظیموں پاکستان سنی تحریک اور تحریک لبیک کے مخفف ہیں۔

خراب کی گئی تصاویر میں سے معروف خاتون ماہر تعمیرات اور تاریخ دان یاسمین لاری کی تصویر پر توہین مذہب کے الزام میں سزائے موت کی منتظر آسیہ بی بی کو پھانسی دینے کا مطالبہ لکھا گیا تھا کہ ‘شان تاثیر کو جلد سے جلد گرفتار کریں ورنہ نتائج کے ذمہ دار آپ خود ہوں گے’۔

خاتون صحافی زبیدہ مصطفیٰ کی پینٹنگ پر صحافیوں کو دھمکیاں دیتے ہوئے میڈیا کو ’یہودی‘لابی قرار دیا گیا گیا تھا جبکہ سال 2013 میں قبضہ مافیا کے خلاف آواز اٹھانے کی وجہ سے قتل کی گئی معروف سماجی کارکن پروین رحمٰن کی پینٹنگ پر ‘پی ایس ٹی’ تحریر تھا۔

معروف ڈرامہ نویس فاطمہ ثریا بجیا کی پینٹنگ پر شان تاثیر کے خلاف نعرے لکھنے سمیت خادم حسین رضوی کی رہائی کا بھی مطالبہ کیا گیا جو ان 150 افراد میں شامل ہیں، جنہیں 4 جنوری کو لاہور میں سلمان تاثیر کی برسی کے موقع پر ریلی نکالنے کی کوشش کے دوران حراست میں لے لیا گیا تھا۔