|

وقتِ اشاعت :   February 14 – 2018

کوئٹہ: وزیراعلیٰ بلوچستان میرعبدالقدوس بزنجو نے کہا ہے کہ بلوچستان میں بسنے والی اقلیتی برادری کا صوبے کی ترقی اور خوشحالی میں ہمیشہ نمایاں کردار رہاہے۔

ہمارے معاشرے میں اقلیت کو انتہائی قدر اور عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے اور انہیں یکساں حقوق حاصل ہیں۔حکومت اقلیتوں کی ترقی اور ان کو درپیش مسائل کے حل کے لئے ہرممکن اقدامات کرے گی۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ہندو پنچائت کوئٹہ اور بھاگ کے وفود سے ملاقات میں کیا۔ اس موقع پر صوبائی وزراء میرسرفراز بگٹی، طاہر محمود خان اور سابق رکن صوبائی اسمبلی بسنت لعل گلشن بھی موجود تھے۔

وفود کے شرکاء نے وزیراعلیٰ کو ہندو پنجائت کو درپیش مسائل سے آگاہ کیا اور ان کے حل کی درخواست کی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ بلوچستان میں بسنے والی تمام اقوام کا آپس میں ہمیشہ سے محبت اور احترام کا رشتہ رہاہے۔ صوبے میں بسنے والی تمام اقلیتوں نے ہمیشہ صوبے کی ترقی اور خوشحالی میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ہے۔

وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہمارے قبائلی معاشرے میں اقلیتوں کا اہم مقام ہے تاہم ماضی میں امن وامان کی خراب صورتحال کے سبب انہیں بھی تنگ کیا گیا جس کی وجہ سے کئی ہندوخاندان بلوچستان سے ہجرت کرنے پر مجبور ہوگئے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ پچھلے پانچ سالوں میں امن وامان میں غیرمعمولی بہتری آئی ہے اور ہجرت کرنے والی ہندو برادری اور دیگر لوگ واپس آرہے ہیں۔

وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہندو برادری نے ہمیشہ ثابت قدمی کا مظاہرہ کیا اور صوبے کی ترقی میں اپنا حصہ ڈالا،جسے ہر بلوچستانی قدر کی نگاہ سے دیکھتاہے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہندو برادری سمیت صوبے میں بسنے والی تمام اقلیتوں سے کوئی ناانصافی نہیں ہونے دی جائے گی۔ تمام محکموں میں اقلیتی برادری کے لئے مختص کوٹہ کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ ترقیاتی اسکیموں میں بھی ان کا جائز حصہ فراہم کیا جائے گا۔

مسائل کے حل کی یقین دہانی پر وفود نے وزیراعلیٰ کا شکریہ ادا کیا اور ہندو پنجائت کی طرف سے حکومت کو ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی۔ دریں اثناؤزیراعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو نے سریاب روڈ پر واقع سرکاری گودام میں لاکھوں گندم بوریاں خراب ہونے پر برہمی کا اظہار کر تے ہوئے کہا ہے کہ محکمہ خوراک اپنی غفلت اور نا اہلی کے باعث گندم خراب کر دیتے ہیں ۔

عوام کے حقوق پر کسی بھی صورت کسی کیساتھ انصاف نہیں کیا جائیگا جو گندم خراب ہوئی ہے اور بار بار ما فیا کا نام لیا جا رہا ہے سیکرٹری خوراک فوری طور پر اس ما فیا کو بے نقاب کریں اور مجھے جلد اس بارے آگاہ کیا جائے سیکرٹری خوراک نے وزیراعلیٰ کو بتایا کہ ایک ما فیا محکمہ خوراک کو بد نام کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جس کی وجہ سے ہر سال گندم کی بوریاں خراب ہونے لگتی ہے ۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نے صوبائی وزیر داخلہ میر سرفراز بگٹی اوراور مشیر خوراک میر ضیاء اللہ لانگو پر مشتمل ایک کمیٹی قائم کر دی باوثوق ذرائع کے مطابق گزشتہ روز صوبائی کا بینہ میں وزیراعلیٰ بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو اجلاس کے دوران سیکرٹری خوراک پر برہم ہو گئے اور کہا ہے کہ محکمہ خوراک کو کیوں بدنام کیا جا رہا ہے اور محکمہ خوراک کے افسران وملازمین کی وجہ سے ہر سال لاکھوں بوریاں گندم خراب ہونے لگتی ہے اور اس پر ہم کسی بھی صورت خاموش نہیں رہیں گے اور جو بھی ملوث پایا گیا ۔

ان کے خلاف سخت ایکشن لیا جائیگااور محکمہ کو مافیا سے چھٹکارا دلایا جائے عوام کے حقوق پر کسی بھی صورت کسی کیساتھ انصاف نہیں کیا جائیگا جو گندم خراب ہوئی ہے اور بار بار ما فیا کا نام لیا جا رہا ہے سیکرٹری خوراک فوری طور پر اس ما فیا کو بے نقاب کریں اور مجھے جلد اس بارے آگاہ کیا جائے ۔

تا ہم سیکرٹری خوراک نے وزیراعلیٰ بلوچستان کو آگاہ کیا کہ محکمہ خوراک میں ایک ما فیا محکمہ کو بدنام کر نے پر تلی ہوئی ہے اور مافیا ہی گندم کو خراب کر دیتی ہے اور پھر ان میں لوٹ مار کا سلسلہ شروع کر دیتے ہیں اور یہ مافیا آج سے نہیں کئی عرصے سے سر گرم ہے ۔

سریاب روڈ پر واقع گودام میں جو گندم خراب ہوئی ہے وہ ان ما فیا کی وجہ سے خراب ہے اور ایک منصوبے کے تحت گندم میں رد بدل کر کے باقی گندم کو ریکارڈ میں لائے بغیر فروخت کر دیتے ہیں ۔

جس پر وزیراعلیٰ بلوچستان نے کہا ہے کہ ما فیا کو بے نقاب کیا جائے کیونکہ اس حوالے سے کسی کیساتھ کوئی رعایت نہیں کی جائے گی اور وزیراعلیٰ بلوچستان نے صوبائی وزیر داخلہ میر سر فراز بگٹی اور صوبائی مشیر خوراک میر ضیاء اللہ لانگو کے سربراہی میں ایک کمیٹی بنا دی ۔